بند کریں
شاعری ناصر کاظمی

کچھ کہہ کے خموش ہو گئے ہم

-

Kuch keh key


(268) ووٹ وصول ہوئے