بند کریں
شاعری ناصر کاظمی

وہ دلنواز ہے لیکن نظر شناس نہیں

-

Woh dilnwaz


(812) ووٹ وصول ہوئے