بند کریں
شاعری ناصر کاظمی

یہ بھی کیا شام ملاقات آئی

-

Yeh bhi kia shaam


(623) ووٹ وصول ہوئے