بند کریں
شاعری نوید ہاشمی

اپنی باتیں کب دریا سے کہتی ہے

-

apni batain kab darya se kehti hai


(273) ووٹ وصول ہوئے