بند کریں
شاعری نوید ہاشمی

کڑی ہے دھوپ سر پر کس طرح سائے بچھائو گے

-

khari hai dhoop sar par


(360) ووٹ وصول ہوئے