بند کریں
شاعری رفیق اظہر

پھر کسی راکھشس کی ہیں باتیں

-

Phir kisi rakhshas ki hain baaten


(14) ووٹ وصول ہوئے