بند کریں
شاعری رخشندہ نوید

گزر تو جائے گھڑی جو بھی یادِ یار کی ہو

-

guzar tu jaye ghari ju bhi yaad e yaar ki hoo


(82) ووٹ وصول ہوئے