بند کریں
شاعری رخشندہ نویدگزر تو جائے گھڑی جو بھی یادِ یار کی ہو

(82) ووٹ وصول ہوئے