بند کریں
شاعری رخشندہ نویدجو بھی دل میں ہے ، مرے اِظہار میں تو آئے گی

(79) ووٹ وصول ہوئے

: متعلقہ عنوان