بند کریں
شاعری رخشندہ نوید

تو نے سوچا ہی نہیں کچھ بھی ہٹا کر اس سے

-

tu ne socha hi nahi kuch bhi hata kar uss ne


(98) ووٹ وصول ہوئے