بند کریں
شاعری رساچغتائی

ٹوٹ کر پیار کیوں نہیں کرتا

-

toot kar piyar kiyon nahi karta


(397) ووٹ وصول ہوئے

: متعلقہ عنوان