بند کریں
شاعری راشد مرادعجب ہی کیا جو مکیں لوٹ کر نہیں آئے

(179) ووٹ وصول ہوئے