بند کریں
شاعری رحمان حفیظنئی تعمیر کا دیرینہ فسوں ٹوٹ گیا

(328) ووٹ وصول ہوئے