بند کریں
شاعری رضوان بابر

کب تلک دوریاں سہی جائیں

-

kab talak doorian sahi jaen


(8) ووٹ وصول ہوئے