بند کریں
شاعری صبیحہ صباکبھی حیران ہوتی ہوں کبھی انجان ہوتی ہوں

(343) ووٹ وصول ہوئے