بند کریں
شاعری سعید شارققفل کھولوں بھی تو باہر نہیں جانے دیتا

(34) ووٹ وصول ہوئے