بند کریں
شاعری ساغر صدیقی

میں تلخی حیات سے گھبرا کے پی گیا

-

Main talkhi hayat sey


(337) ووٹ وصول ہوئے