بند کریں
شاعری صائمہ کامرانیہاں کسی کو کسی کی طلب نہیں ہے دوست

(216) ووٹ وصول ہوئے

: متعلقہ عنوان