بند کریں
شاعری سلیم طاہر

غبار کیسا ہے پیشِ نظر نہیں کھلتا

-

gubar kaisa hai pesh nazar nahi khulta


(347) ووٹ وصول ہوئے