بند کریں
شاعری ثمینہ راجہچشم حیران بھی ہے عہد کی پابند بھی ہے

(386) ووٹ وصول ہوئے