بند کریں
شاعری ثمینہ راجہ

تنہا سرِ انجمن کھڑی تھی

-

tanha sar e anjuman khari thi


(299) ووٹ وصول ہوئے