بند کریں
شاعری ثمینہ راجہتنہا سرِ انجمن کھڑی تھی

(299) ووٹ وصول ہوئے