بند کریں
شاعری شبنم شکیلخود ہی اپنے درپئے آزار ہو جاتے ہیں ہم

(288) ووٹ وصول ہوئے