بند کریں
شاعری شاہدزکی

جدھر بھی دیکھئے ، اک راستہ بنا ہوا ہے

-

jidher bhi ddekhiye ik rasta bana hua hai


(228) ووٹ وصول ہوئے