بند کریں
شاعری شکیب جلالی

خموشی بول اٹھے ہر نظر پیغام ہو جائے

-

Kamoshi bol

شکیب جلالی

shakeeb jalali

(359) ووٹ وصول ہوئے