بند کریں
شاعری شکیل بدیوانی

موت ہی نہ آ جائے کاش ایسے جینے سے

-

Maut hi na ay jaye


(274) ووٹ وصول ہوئے