بند کریں
شاعری شکیل جاذبکوئی پیغام ترا اب کے زبانی بھی نہیں

(272) ووٹ وصول ہوئے