بند کریں
شاعری شرافت عباس

بات کچھ اور تھی تحریر میں آئی کچھ اور

-

baat kuch or thi thereer main aayi kuch or


(253) ووٹ وصول ہوئے