بند کریں
شاعری شارق جمال خانہیں ادھرگرچہ تھے اُدھر کے ہم

(49) ووٹ وصول ہوئے