بند کریں
شاعری تابش کمالدِل و دماغ پہ جو بار تھا ، نہیں اُترا

(872) ووٹ وصول ہوئے