بند کریں
شاعری تابش کمال

دِل و دماغ پہ جو بار تھا ، نہیں اُترا

-

dil o dimag pey ju bar tha nahi utra


(874) ووٹ وصول ہوئے