بند کریں
شاعری تابش کمالکبھی سُنی ہی نہیں شہر میں کوئی آواز

تابش کمال

tabish kamal

(794) ووٹ وصول ہوئے

: متعلقہ عنوان