بند کریں
شاعری ولی دکنیجو آیا مست ساقی

(181) ووٹ وصول ہوئے