بند کریں
شاعری وصی شاہدیوار پہ لرزہ ہے تو در کانپ رہا ہے

(221) ووٹ وصول ہوئے

: متعلقہ عنوان