بند کریں
شاعری ظفرترمذیجذبہٴ عشق کہ محمل کشِ معنی نہ ہوا

(141) ووٹ وصول ہوئے

: متعلقہ عنوان