بند کریں
شاعری ظفرترمذی

کوئی وعدہٴ محبت اگر استوار ہوتا

-

koi wada e muhabbat ager istewar hota


(158) ووٹ وصول ہوئے

: متعلقہ عنوان