بند کریں
شاعری ظفرترمذیقیس جو عشق بھی تھا عشق کی تصویر بھی تھا

(427) ووٹ وصول ہوئے

: متعلقہ عنوان