بند کریں
شاعری ظفرترمذیان کے وعدوں میں استواری ہے

(498) ووٹ وصول ہوئے