بند کریں
شاعری ظہیر کاشمیریعرش کی خلوتوں کا ہوں کرسی نشیں

(281) ووٹ وصول ہوئے