Tehzeeb E Sukhan

تہذیبِ سخن ( شعری مجموعہ)

ریحانہ اعجاز منگل جون

Tehzeeb E Sukhan
میں بہت خوش نصیب ہوں جسے بےشُمار ادبی دوستوں کی پُرخلوص رفاقت میسر ہے ۔
اس وقت میرے ہاتھ میں ایک ضخیم کتاب بعنوان " تہذیبِ سخن " موجود ہے ۔ یہ بیش بہا ، نادر و نایاب تحفہ میری عزیز دوست نے بہت پیار و محبت سے مجھے 21 مئی کو بھیجا تھا لیکن میں آؤٹ آف سٹی تھی اس لئے اس کتاب سے بروقت فیضیاب نہ ہو پائی ۔
" تہذیبِ سخن" تخلیق تو محترم جناب " راؤ تہذیب حسین تہذیب" کی ہے لیکن میں ان کا تعارف بعد میں پیش کروں گی پہلے میں ایک بیٹی کو متعارف کروانا چاہوں گی جو یقیناً اپنے والدین کے لئے باعثِ فخر ہیں ۔


میری عزیز دوست " سباس گل" Subas Gull کا نام کسی بھی تعارف کا محتاج نہیں ۔ سباس گل جانی مانی شاعرہ و مصنفہ ہیں ۔
ان کے قلم کی روانی رگوں میں بہتے لہو کی مانند ہمہ وقت قرطاس کے سینے پر ان کے نادر و نایاب خیالات کو ایک تسلسل سے بہاتی جا رہی ہے اور یکے بعد دیگرے ان کی کتب ادب کی دنیا میں اپنی جگہ بناتے ہوئے ان کا نام صفِ اول کی مصنفات میں سرفہرست لاتے ہوئے انہیں ایک خاص پہچان عطا کر رہی ہیں ۔

(جاری ہے)


اور اس بیٹی نے ایک بہترین کارنامہ سر انجام دیتے ہوئے بیٹیوں کا سر فخر سے بلند کر ڈالا ہے ۔
یہ بیٹی ہیں "سر راؤ تہذیب حسن تہذیب " کی۔
سر راؤ ایک معروف شاعر / قطعہ نگار تھے ، جنہوں نے " بزمِ تہذیبِ سُخن " کے نام سے ایک ادبی تنظیم بھی بنائی تھی جس کے تحت تاریخی مشاعرے کروائے اور ان مشاعروں سے کئی نامور نام سامنے آئے ۔

۔۔
لیکن افسوس کہ پاکستان میں کبھی بھی ٹیلینٹ کو اس طرح سراہا نہیں جاتا جس طرح سراہا جانا چاہیئے ۔۔۔۔۔۔
سباس کے والد محترم جناب راؤ تہذیب حسین تہذیب نے خوبصورت ملی نغمہ بھی لکھا" وطن کی مٹی سلام تجھ پر" جسے معروف گلوکار " نجم شیراز " نے اپنے خوبصورت انداز و لب و لہجے سے امر کر ڈالا ۔ جو 6 اگست 2007 میں پہلی بار " پی ٹی وی" سے ٹیلی کاسٹ کیا گیا ۔

۔۔
افسوس سر راؤ کا یہ خوبصورت ملی نغمہ نہ تو کبھی یو ٹیوب کی زینت بنایا گیا نہ ہی کبھی کہیں اور شئیر کیا گیا ۔۔۔۔۔۔۔
باپ تو بیٹیوں کا آئیڈیل ہوتے ہیں ۔ ان کی کامیابی کیسے بیٹیوں کے چہرے پر روشنی کا مؤجب بنتی ہے میں بہت اچھی طرح واقف ہوں ۔۔۔
سر راؤ نے اپنی خوبصورت شاعری کو اب تک اپنے قارئین کی نظروں سے اوجھل محض خود تک محدود کیا ہوا تھا لیکن ان کی بیٹی کو یہ گوارہ نہ ہوا ۔


سُباس گل جو خود سولہ / سترہ کتب کی خالق ہیں نے اپنے والد کا تمام تر شعری مواد اکٹھا کیا اور انہیں شعری مجموعے کی صورت پبلش کروا کر اپنے والد کو سرپرائز کرتے ہوئے شاعری کی دنیا میں ایک نادر کتاب کا اضافہ کر ڈالا ۔
" تہذیبِ سخن " نامی یہ کتاب خوبصورت سرورق سے آراستہ ہے ۔ بہترین سفید کاغذ سے مرصع اس کتاب کے 304 صفحات ہیں اور ہر صفحہ پر موجود قطعات ، اشعار ، حمد ، نعت دل موہ لینے والے خوبصورت الفاظ اپنے اندر ہرموضوع کو سموئے ہوئے ہیں ۔


سمجھ نہیں آ رہی کہ کون سا قطعہ احباب کی نذر کروں کہ ہر قطعہ اپنی مثال آپ ہے ۔ قلم پر کہا گیا ایک قطعہ دیکھیئے ، کتنی سادگی سے کتنی گہرائی بیان کی گئی ہے ۔
" رنج و غم کیا کیا اٹھاتا ہے قلم
دل کسی کا کب دکھاتا ہے قلم
ہاں اسے نیلام کر دے گر کوئی
خون کے انسو بہاتا ہے قلم
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔
پروین شاکر کی یاد میں کہا گیا ایک خوبصورت قطعہ ملاحظہ کیجیئے ۔
جس طرح چھوڑ گئی ہے بھری محفل پروین
اس طرح بھی نہ کوئی بزمِ سخن سے بچھڑے
اب بھی زندہ ہے وہ ہر اہلِ چمن کے دل میں
مدتیں ہو گئیں اس کو چمن سے بچھڑے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
عبدالستار ایدھی کی یاد میں کئی قطعات کہے گئے ہیں ایک آپ احباب کی نذر کرتی ہوں ۔

" کردار میں خلوص ، محبت میں بےمثال
جو شخص بےمثال تھا وہ بھی چلا گیا
ایدھی کے بعد کیا بچا تہذیب ، کچھ نہیں
اک صاحبِ جمال تھا وہ بھی چلا گیا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سر راؤ کا یہ قطعہ ایسا لگتا ہے جیسے آج کل کے نوجوانوں کے لیے ہی کہا گیا ہو ۔
" جو بزرگوں کا آسرا نہ بنی
تُف ہے ایسی تری جوانی پر
کام آئی نہیں کسی کے جو
خاک ہو ایسی زندگانی پر
۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کرونا نامی خوفناک وبا پر کیا خوب قطعہ کہا گیا ہے ۔
" چرچے تھے جن کی ہمت و جرات کے
ڈرتے نہ تھے جو مالک و مولا کے خوف سے
چلتے تھے جو اکڑ کے زمیں پر بصدِ گرور
پھرتے ہیں منہ چھپائے کرونا کے خوف سے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وطن سے محبت کا اظہار اس قطعے میں قدر رواں و سادگی کا مظر ہے کہ ہر لفظ گویا دل میں اترتا محسوس ہوتا ہے ۔


" تجھ سے دنیا میں ہے وقار وطن
تیری حرمت پہ جاں نثار وطن
تو میری ہر خوشی کا ہے مرکز
کیوں نہ ہو تجھ سے مجھ کو پیار وطن
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ایسے ان گنت خوبصورت قطعات پر مشتمل یہ کتاب یقیناً پڑھے جانے کے لائق ہے ۔ عمدہ اور بہترین ادب کا حق بنتا ہے کہ اُسے خرید کر پڑھا جائے اور اُسے اپنی الماری ، یا ٹیبل کی زینت ضرور بنایا جائے ۔

سو دوستوں سے گزارش ہے کتاب خرید کر کتاب دوست ہونے کا حق ادا کیجیئے ۔
باپ کی لازوال کاوشات پر مبنی یہ کتاب بلا شُبہ ایک بیٹی کی لازوال محبت سے مربوط ہے .
پیاری سباس اس کتاب کی کامیابی کے لئے دل سے دعا گو ہوں ۔ اللہ آپ کے والد کو لمبی عمر و صحت سے نوازے ۔ سدا سلامت رکھے تا قیامت رکھے ۔ آمین ثم امین ۔
تاریخ اشاعت: 2021-06-08

Your Thoughts and Comments