بند کریں
ادب حکایاتظلم کے مقابلے میں نرمی سے پیش آؤ

مزید حکایات

- مزید مضامین

مزید عنوان

ظلم کے مقابلے میں نرمی سے پیش آؤ
ایک شریف دانا شخص بازار سے گزر رہا تھا کہ ایک عقل سے پیدل مست نے راستہ روک کر اس کا گریبان پکڑ لی
ظلم کے مقابلے میں نرمی سے پیش آؤ
حکایاتِ سعدی:
حضرت شیخ سعدی رحمتہ اللہ علیہ بیان کرتے ہیں ایک شریف دانا شخص بازار سے گزر رہا تھا کہ ایک عقل سے پیدل مست نے راستہ روک کر اس کا گریبان پکڑ لیا اور اس کے منہ پر تھپڑ رسید کردیئے ۔ اس شریف النفس نے اس کا یہ تشدد نہایت صبر سے برداشت کیا اور جواب میں اسے جھڑکا تک نہیں۔ ایک شخص جو یہ تماشہ دیکھ رہا تھا اس نے اس شریف النفس سے کہا کہ کیا مرد نہیں جو بزدلوں کی طرح مارکھاتا رہا؟اس شریف النفس نے اس کی بات سن کر کہا کہ بھائی! ایسا خیال ہر گز دل میں نہ لا بلکہ میری طرح اس راز سے آگاہ ہوجا کہ ظلم کرنے سے بہتر سہنا ہے اور یہی شرافت و عظمت کی دلیل ہے۔ شریف النفس وہی ہے جو ظلم سہتا ہے اور ظلم نہیں کرتا ظلم کے مقابلے میں نرمی سے پیش آؤ کہ یہی دانائی کی دلیل ہے۔
مقصود بیان:حضرت شیخ سعدی رحمتہ اللہ علیہ اس حکایت میں بیان کرتے ہیں کہ اگر کوئی تمہارے ساتھ زیادتی کرے تو اس کی زیادتی کا جواب زیادتی سے نہ دو بلکہ اپنے بہترین اخلاق سے اسے مجبور کردو کہ وہ اپنی غلطی تسیلم کرے اور آئندہ کسی اور کے ساتھ زیادتی کا مرتکب نہ ہو۔

(0) ووٹ وصول ہوئے