Kya Urdu Shayari Apna Johar Kho Chuki ?

کیا اردو شاعری اپنا جوہر کھو چکی ؟

بلال شبیر بدھ مئی

Kya Urdu Shayari Apna Johar Kho Chuki ?
بہت سارے مصنفین تھے جنھوں نے اردو ادب میں نظریات پر گرفت کی، تاہم ان کا باضابطہ تصورجب تک نہیں کیا گیا جب تک کہ محمد حسین آزاد، الطاف حسین حالی اور شبلی نعمانی نے ان تصورات کے ساتھ مشغول ہونا شروع نہیں کیا۔ یہ وہی لوگ تھے جنہوں نے اردو ادب میں جدید ادبی تنقید کی بنیاد رکھی۔ تاہم، اردو میں شاعرانہ افکار کو سمجھنے والے اصولوں کو اب خطرہ لاحق ہے۔

آج بدقسمتی سے، پاکستان میں شاعری کا ایک بہت بڑا مجموعہ تقلید کی سوچ پر مشتمل ہے۔ یہ تقویٰ کے ارسطو سے متعلق تصور کے خلاف ہے جس میں ایک فنکار ذہن کے اندر کسی تصور کو تصور کرنے کے لئے تقلید کے عمل کو اندرونی شکل دیتا ہے اور پھر اپنے تخیل کو استعمال کرکے آرٹ کا ایک فن تخلیق کرتا ہے۔ اس میں کوئی شک نہیں ہے کہ احساسات اور جذبات شاعری میں ایک اہم کردار ادا کرتے ہیں، لیکن وہ اس وقت تک انتشار کا شکار رہتے ہیں جب تک کہ انہیں تخلیقی ڈھانچے میں نہ لایا جائے۔

(جاری ہے)

شاعری کے سانس کے خیالات دانائی کو ختم کیے بغیر صرف خوشی فراہم کرتے ہیں۔ تاہم، آج کی اردو شاعری صرف نظریات کی اس غربت کا شکار نہیں ہے اور در حقیقت خطے کی عمومی فکری حالت کی علامت ہے۔ جب ہم اردو ادب کے جدید دور کا جائزہ لیتے ہیں تو، ہمیں بادشاہوں اور حکمرانوں کے دربارنظر آتے ہیں جو شاعروں کے لشکروں سے بھرے ہوئے ہیں، ایک دوسرے کے ساتھ الفاظ کا مقابلہ کرتے ہیں اور بغیر سوچے سمجھے شاعری تحریر کرتے ہیں۔

بہادر شاہ ظفر کے دربار میں ہمیں ایسے شاعر ملتے ہیں جو عام حسد میں مبتلا ہیں، اور شاعری کے ذریعہ اپنا حق جیتنے کی تدبیریں کرتے ہیں۔ لیکن ہمیں ان اوقات میں ایسی بہت ساری مثال نہیں مل سکتی جہاں مفکرین انسانیت، سائنس، فلسفہ اور علم کے دیگر شعبوں سے متعلق نظریات پر بحث کر رہے تھے۔ یہ مسئلہ وقت کے ساتھ اور بھی بڑھ گیا ہے، لہذا اس کی وجہ یہ موجودہ صورتحال ہے جس سے آج اردو شاعری کا سامنا ہے۔

جب آزاد اور حالی نے اپنے ادبی جدیدیت کے منصوبے کا آغاز کیا تو، وہ نئے موضوعات متعارف کروا کر اور جدید ادب پر دوبارہ کام کرکے نئے خیالات کو شاعری میں شامل کرنا چاہتے تھے۔ 1874 میں ایک لیکچر میں، آزاد نے مصنفین پر زور دیا کہ وہ روایتی دیواروں اور طوقوں سے شاعری کو آزاد کریں، بصورت دیگر، انہوں نے متنبہ کیا،“ایک دن ایسا آئے گا جب آپ کی اولاد شاعری کے سراغ کے بغیر اپنی زبان پائے گی۔

”اس کے بعد، اردو نے کچھ معیاری اشعار دیکھے جو خیال کی وسعت، احساسات کی گہرائی اور تخیل کی عظمت کوزندہ کرتے ہیں۔ بیسویں صدی کے وسط کے دوران، اردو شاعری نے جدید دنیا کے ساتھ بڑھتی ہوئی بیزاری پر غور کرکے اردو ادب کے شاعرانہ وسائل کو تقویت بخشی۔ لیکن اب اس لہر کا طواف پر محیط ہے، اور اردو شاعری کا عصری ادبی منظرنامہ تیزی سے ایک ویران زمین سے مشابہت رکھتا ہے۔

اس تشویشناک منظر میں دو عوامل نے حصہ لیا ہے سکڑتی ہوئی تخیل اور فلسفیانہ سوچ کی عدم موجودگی۔ جب کوئی شاعر علم کی نئی دھاریں جذب کرنے سے باز آجاتا ہے تو، یہ صرف ان کے تخیلاتی افق کو محدود کرنے کا کام کرتا ہے۔ عبد الرحمن نے اپنی کتاب ”معرفت الشیر“ میں اس پر تبصرہ کیا ہے کہ ان دونوں عوامل نے شاعری کی غربت میں کس طرح اہم کردار ادا کیا ہے۔

رحمان کے بقول، جب کسی شاعر کا علم کا شعور وسیع ہو تب ہی وہ معنی اور استعارات کی کثرت تلاش کر سکے گا۔ وہ لکھتا ہے، “فکرمند اور بے ہودہ اشعار کے درمیان آپ کو ماضی میں ہمیشہ خیالات کا ایک وسیع میدان نظر آجائے گا، اور آخرالذکر میں نظریات کی تنگی اور کمی۔ وسیع خیالات کی طرف توجہ دینے والا وہی سوچوں کو سینکڑوں بار دہرائے گا لیکن ہمیشہ انھیں نئے معنی کے ساتھ ایک نئے انداز میں بیان کرے گا۔

دوسری طرف، جو نظریات کے تنگ نظری پر کاربند ہے وہ ایسا کرنے میں ناکام ہوگا۔” لہذا، آج کل پاکستان میں زیادہ تر شاعری کا فقدان پایا جاتا ہے کیوں کہ فلسفے کے چشمے تقریبا خشک ہوچکے ہیں۔ اس کے نتیجے میں، جب کہ ہمارے دل اب بھی جذبات سے سیر ہیں، ہمارے ذہنوں میں فلسفیانہ افکار کی تیزی سے نزاکت ہوتی جارہی ہے۔ اردو شاعری کو آج ایک نیا رومانویت پیدا کرکے فکر اور احساس کے مابین مفاہمت کی ضرورت ہے جس میں شاعری اور فلسفہ دونوں ایک بار پھر ایک دوسرے کو آگاہ کرنا شروع کر سکتے ہیں۔ اگر ہم اردو شاعری کی شان کو دوبارہ حاصل کرنا چاہتے ہیں تو یہ ضروری ہے ۔
تاریخ اشاعت: 2020-05-20

Your Thoughts and Comments