Roye Tussi Vi Oo

روئے تُسی وی او ، روئے اسی وی آں

مدثر ہارون منگل جولائی

Roye Tussi Vi Oo
کبھی تخلص یا عرفیت اتنی مقبول ہوجاتی ہے کہ اصل نام گمنام ہو جاتا ہے، جیسے قصور کی اللہ وسائی ملکہ ترنم نور جہاں کے نام سے پہچانی گئی چراغ دین کو بھی دنیا "استاد دامن" کے نام سے ہی جانتی ہے۔ قلندرانہ مزاج کے جوگی نے زندگی لاہور کی ہیرا منڈی کے ایک چھوٹے سے حجرے میں گزار دی۔ یوں تو بہت زبانیں جانتے تھے مگر شاعری کے لئے پنجابی کا ہی انتخاب کیا۔



ہر دور میں وقت کے حکمرانوں سے ٹکر لی اور کبھی تھانے میں پائے جاتے تو کبھی جیل میں۔ کلائی پر ہمہ وقت ہتھکڑی کا نشان رہتا۔ اسی دور میں استاد دامنؔ کی ایک نظم
"دما دم مست قلندر" بڑی مشہور ہوئی۔

دما دم مست قلندر
دما دم مست قلندر
ایہہ دور عوامی آیا اے
کیہ سکھیا، کیہ سکھایا اے
کیہ سمجھیا، کیہ سمجھایا اے
گل گل اُتے چھریاں خنجر
دما دم مست قلندر

عوامی شاعر نے ہمیشہ استحصالی طبقات کی مذمت کی اور حاکمانِ وقت کی گوشمالی میں کبھی بخل سے کام نہیں لیا۔

(جاری ہے)

ان کی شہرہ آفاق نظم "ٹیکس" پڑھو تو یوں لگتا ہے جیسے آج کے حالات پر ہی لکھی ہے۔

چاندی سونے تے ہیرے دی کان تے ٹیکس
عقل مند تے ٹیکس نادان تے ٹیکس
مکان تے ٹیکس دکان تے ٹیکس
ڈیوڑھی تے ٹیکس دالان تے ٹیکس
پانی پین دے ٹیکس روٹی کھان تے ٹیکس
آئے گئے مسافر تے مہمان تے ٹیکس
انجیل تے ٹیکس قرآن تے ٹیکس
لگ نہ جائے دین ایمان تے ٹیکس
ایسے واسطے بولدا نئیں دامن
متاں لگ جائے میری زبان تے ٹیکس

استاد دامن کی مقبولیت کا عروج ساٹھ اور ستر کا عشرہ تھا۔

وہ ایوبی اور ضیائی مارشل لاء کے خلاف بھی بولے اور بھٹو کی جمہوریت میں بھی جلسوں کی اگلی صفوں میں نعرے مارتے پائے گئے۔ آمروں اور جمہوریت کے بزر جمہروں کی منافقت پر انھوں نے وہ شہرہ آفاق نظم لکھ ماری جو بعد میں ضرب المثل کی حیثیت اختیار کر گئ۔

کھائی جائو کھائی جائو، بھیت کِنّے کھولنے
وچو وچ کھائی جائو، اُتوں رولا پائی جائو
چاچا دیوے بھتیجے نوں، بھتیجا دیوے چاچے نوں
آپو وچ ونڈی جائو تے آپو وچ کھائی جائو
انھاں مارے انھی نوں، گھسن لگے تھمی نوں
جنی تہاتھوں انھی پیندی، اونی انھی پائی جائو
مری دیاں چوٹیاں تے چھٹیاں گزار کے
غریباں نوں کشمیر والی سڑکو سڑکی پائی جائو
ڈِھڈ بھرو اپنے، تے اینہاں دی کیہ لوڑ اے
بھکھیاں نوں لمیاں کہانیاں سنائی جائو

سقوط ڈھاکہ پر بہت آزردہ خاطر تھے اور ہمہ وقت رنجیدہ رہتے تھے۔

مشرقی پاکستان کے بارے میں ان کی لکھی نظم نشتر سی دل میں اترتی ہے اور جگر کو چھلنی کردیتی ہے۔

بھانویں مونہوں نہ کہیے پر وِچوں وچی
کھوئے تُسی وی او ، کھوئے اسی وی آں
ایہناں آزادیاں ہتھوں برباد ہونا
ہوئے تُسی وی او ، ہوئے اسی وی آں
کجھ امید اے زندگی مل جائے گی
موئے تُسی وی او ، موئے اسی وی آں
جیوندی جان ای موت دے منہ اندر
ڈھوئے تُسی وی ، ڈھوئے اسی وی آں
جاگن والیاں رج کے لٹیا اے
سوئے تُسی وی او ، سوئے اسی وی آں
لالی اکھیاں دی پئی دسدی اے
روئے تُسی وی او ، روئے اسی وی آں

استاد دامن کا آخری وقت ضیائی مارشل لاء میں گزرا۔

گو جسم میں جان نا تھی پر جلسوں کو گرمائےرکھتے اور شعر کہنے سے باز نا آتے۔ پنجابی زبان کا یہ عظیم شاعر تہتر برس کی عمر میں ہمیں داغ مفارقت دے گیا۔ انہی کا اپنا شعر جو ان کی قبر کے کتبے پر لکھا ہے، ان کی زندگی کی پوری کہانی کا احاطہ کرتا ہے اور ہر پڑھنے والے کو اشکبار کرتا ہے۔

ماری سرسری نظر جہان اندر
تے ورق زندگی دا تھلیا میں

دامن رفیق نہ ملیا جہان اندر
ماری کفن دی بُکل تے چلیا میں !
تاریخ اشاعت: 2020-07-21

Your Thoughts and Comments