ایمنسٹی سکیم کی مدت دسمبر 2019ء تک بڑھائی جائے تا کہ زیادہ سے زیادہ شہری مستفید ہو سکیں

اسلام آباد چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری کے صدر احمد حسن مغل کا بیان

ایمنسٹی سکیم کی مدت دسمبر 2019ء تک بڑھائی جائے تا کہ زیادہ سے زیادہ شہری ..
اسلام آباد (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین - اے پی پی۔ 15 مئی2019ء) اسلام آباد چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری (آئی سی سی آئی)کے صدر احمد حسن مغل نے کہا ہے کہ ایمنسٹی سکیم کی مدت کم از کم دسمبر 2019ء تک بڑھائی جائے تا کہ زیادہ سے زیادہ شہری مستفید ہو سکیں اور اپنے خفیہ اثاثوں ، اخرجات اور سیلز کو ظاہر کر سکیں جس سے معیشت کو فائدہ ہو گا، پی ٹی آئی حکومت نے خفیہ اخراجات، سیلز اور اثاثوں کو ظاہر کرنے کیلئے اپنی پہلی ایمنسٹی سکیم کا اعلان کر دیا ہے تاہم یہ سکیم صرف 30 جون 2019ء تک فراہم کی گئی ہے جس میںتوسیع کی جائے۔

آئی سی سی آئی کے صدر احمد حسن مغل نے کہا کہ 1958ء سے لے کر اب تک پاکستان میں کئی ایمنسٹی سکیمیں جاری گی گئی لیکن وہ دستاویزی معیشت کو فروغ دینے، ٹیکس کی بنیاد کو وسیع کرنے اور ملک کے ٹیکس ریونیو میں خاطر خواہ اضافہ کرنے میں ناکام رہی ہیں جس کی اہم وجہ یہ ہے کہ حکومتوں نے ان سکیموں کے بارے میں سٹیک ہولڈرز سے جامع مشاورت نہیں کی۔

(جاری ہے)

انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ حکومت انڈونیشیا کی ایمنسٹی سکیم کے ماڈل کو اپنائے اور اس کی مدت 6سے 9ماہ تک رکھی جائے تا کہ زیادہ سے زیادہ لوگ اس سے فائدہ اٹھا سکیں جس سے دستاویزی معیشت کو فروغ ملے گا اور اور حکومت کے ٹیکس ریونیو میں بھی بہتر ی آئے گی۔

اسلام آباد چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری کے سینئر نائب صدر رافعت فرید اور نائب صدر افتخار انور سیٹھی نے کہا کہ ماہ رمضان اور دیگر مصروفیات کی وجہ سے 45دنوں میں ایمنسٹی سکیم سے فائدہ اٹھانا مشکل ہو گا لہذا انہوں نے حکومت سے مطالبہ کیا کہ اگر نئی ایمنسٹی سکیم کو کامیاب بنانا ہے تو تو اس کو مختصر مدت کیلئے لانے کی بجائے کم از کم چھ ماہ کیلئے جاری کیا جائے تا کہ جو شہری اس سے استفادہ حاصل کرنا چاہتے ہیں وہ اپنی تیاری کر کے اس سے فائدہ اٹھا سکیں۔

Your Thoughts and Comments