صدر مشرف کا سیاسی جلسوں سے خطاب مناسب نہیں‘انتخابی فہرستوں کے حوالے سے تمام سیاسی جماعتوں کے تحفظات دور کئے جائیں گے ۔چیف الیکشن کمشنر

ہفتہ جون 15:39

اسلام آباد (اردوپوائنٹ تازہ ترین اخبار30 جون 2007) چیف الیکشن کمشنر قاضی محمد فاروق نے کہا ہے کہ صدر جنرل پرویز مشرف کا سیاسی جلسوں سے خطاب کرنا مناسب نہیں اور انتخابی فہرستوں کے حوالے سے تمام سیاسی جماعتوں کے تحفظات دور کئے جائیں گے ان خیالات کا اظہار انہوں نے گزشتہ روز لیاقت بلوچ کی قیادت میں ایم ایم اے کے چار رکنی وفد سے ملاقات اور بعد ازاں صحافیوں سے گفتگو کے دوران کیا- نجی ٹی وی کے مطابق ملاقات میں لیاقت بلوچ نے قاضی حسین احمد کا ایک خط چیف الیکشن کمشنر کو پہنچایا جس میں انتخابی فہرستوں کی تیاری کے حوالے سے تحفظات کا اظہار کیا گیا تھا خط میں کہا گیا تھا کہ 30 فیصد ایسے اہل ووٹرز ہیں جن کو نئی انتخابی فہرستوں میں نظرانداز کر دیا گیا ہے اس حوالے سے الیکشن کمیشن عوام کے مطالبات پر پورا نہیں اتر سکا خط میں مطالبہ کیا گیا کہ نئی فہرستوں میں شناختی کارڈ رکھنے والے افراد کو شامل کیا جائے کیونکہ عام انتخابات میں ابھی کافی وقت ہے اس موقع پر چیف الیکشن کمشنر قاضی محمد فاروق نے وفد کو یقین دلایا کہ انتخابات اور فہرستوں کے حوالے سے ان کے تحفظات دور کئے جائیں گے اور یہ سارا عمل قانون اور آئین کے مطابق ہو گا بعد ازیں چیف الیکشن کمشنر نے صحافیوں سے بھی گفتگو جس میں ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہاکہ صدر جنرل پرویز مشرف کا سیاسی جلسوں سے خطاب کرنا مناسب نہیں ہے وہ پہلے بھی ایسا کہہ چکے ہیں انہوں نے کہاکہ انتخابات آنے پر ایک انتخابی ضابطہ اخلاق تیار کیا جائے گا اور اس حوالے سے تمام اقدامات کئے جائیں گے -چیف الیکشن کمشنر نے کہاکہ ووٹر لسٹوں کی تیاری تین مرحلوں میں مکمل کی جائے گی پہلی مرحلہ ڈیٹا اکٹھا کرنے کا تھا جو مکمل ہو چکا دوسرا مرحلہ ڈسپلے سنٹر کا ہے جو 3 جولائی تک جاری رہے گا آخری مرحلے میں ایسے تمام ووٹروں کو فہرست میں شامل کیا جائے گا جن کے پاس پرانے یا نئے شناختی کارڈ ہیں انہوں نے کہاکہ اس حوالے سے سیاسی جماعتوں کے تمام تحفظات دور کر دیئے جائیں گے-

متعلقہ عنوان :