زمبابوے،31ہزار سے زائد افراد ہیضہ کا شکار،1600سے زائد ہلاک

جمعہ جنوری 12:17

ہرارے(اُردو پوائنٹ تازہ ترین۔02جنوری 2009 ء) زمبابوے حکومت ہیضہ کے مرض پر قابو پانے میں ناکام ہوگئی ہے۔ملک بھر میں آلودہ پانی کے استعمال سے اکتیس ہزار سے زائد افراد ہیضہ کا شکار ہوچکے ہیں۔غیر ملکی میڈیا کے مطابق عالمی ادارہ صحت نے کہا ہے کہ اب تک زمبابوے میں 31ہزار 656 افراد میں اس مرض کی تشخیص ہوچکی ہے جبکہ سولہ سو افراد اس مرض میں مبتلا ہوکر ہلاک ہو چکے ہیں۔

(جاری ہے)

اقوا م متحدہ کے امدادی اداروں نے خدشہ ظاہر کیا ہے کہ زمبابوے میں اس مرض سے متاثرہ افراد کی تعداد ساٹھ ہزار تک پہنچ سکتی ہے۔بین الاقوامی ریڈ کراس نے بتایا کہ زمبابوے میں اس مرض سے متاثرہ43 فیصد مریض اسپتال پہنچنے سے قبل موت کے منہ میں چلے جاتے ہیں۔بین الاقوامی ریڈکراس نے افریقاکے جنوبی علاقوں میں سات ایمرجنسی ٹیمیں بھیجنے کا اعلان کیا ہے۔دوسری جانب جنوبی افریقا میں ہیضہ سے اب تک تیرہ افراد ہلاک ہوچکے ہیں۔

متعلقہ عنوان :