ملک میں تبدیلی صرف بیلٹ کے ذریعے لائی جاسکتی ہے،،مولانا فضل الرحمن،دھرنوں اور پرتشدد واقعات سے منتخب جمہوری حکومت کو نہیں گرایا جاسکتا،سربراہ جے یوآئی

جمعرات ستمبر 22:42

ملک میں تبدیلی صرف بیلٹ کے ذریعے لائی جاسکتی ہے،،مولانا فضل الرحمن،دھرنوں ..

اسلام آباد/کوئٹہ(اُردو پوائنٹ اخبار تازہ ترین۔11ستمبر۔2014ء) جمعیت علماء اسلام کی مر کزی مجلس عا ملہ کا پہلا اجلا س قائرجمعیت مو لا نا فضل الرحمن کی صدارت میں ان کی اقامت گا ہ پر منعقد ہ ہوا،مجلس عاملہ کے پہلے باضابطہ اجلاس میں آئین،پارلیمنٹ کی بالادستی اور جمہوریت کا دفاع ایوان کے اندر اور باہر کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے،مجلس عاملہ نے کہا کہ ملک میں تبدیلی صرف بیلٹ کے ذریعے لائی جاسکتی ہے،دھرنوں اور پرتشدد واقعات سے منتخب جمہوری حکومت کو نہیں گرایا جاسکتا،پارلیمنٹ کی بالادستی،آئین کے نفاذ ،جمہوریت کی مضبوطی اور قرآن وسنت کے نظام کیلئے ایوان کے اندر اور باہر جے یو آئی اپنی جدوجہد جاری رکھے گی،کسی صورت اس ملک میں بیرونی ایجنڈا مسلط نہیں ہونے دیا جائے گا۔

اجلاس کا ایجنڈا مرکزی سیکرٹری جنرل مولانا عبدالغفور حیدری نے پیش کیا،ایجنڈا میں ملک کی مجموعی امن وامان کی صورتحال ،حالیہ سیاسی صورتحال اور سیلاب کی مو جو دہ صورتحال اور وزیرستان متاثرین کے معاملات زیر بحث آئے۔

(جاری ہے)

مولانا فضل الرحمن نے اجلاس سے صدارتی خطاب کرتے ہوئے مجلس عاملہ کو ملکی اور بین الاقوامی صورتحال پر مفصل بریفنگ دی،انہوں نے اجلاس سے خطاب کرتے ہو ئے کہا کہ ایک سازش کے تحت ملک میں انارکی پھیلانے کی کوشش کی جارہی ہے لیکن ہم واضح کردینا چاہتے ہیں کہ آئین کی بالادستی،جمہوریت کے تحفظ اور قرآن وسنت کے نظام کے نفاذ کیلئے پہلے کی طرح اب بھی پارلیمنٹ کے اندر مؤثر آواز اٹھائیں گے۔

۔ ایک سازش کے تحت اس ملک کے حالات خراب کرنے کی کوشش کی گئی لیکن تمام سیاسی اور جمہوری قوتوں نے تحمل اور بردباری کا مظاہرہ کیا اور اس وقت جمہوریت کی بقاء،آئین وپارلیمنٹ کی بالادستی کیلئے تمام سیاسی قوتیں متحد ہیں۔۔مولانا فضل الرحمن کا نے کہا کہ اس وقت ملک ایک نازک دور سے گزر رہا ہے،ایک طرف متاثرین آپریشن کی مشکلات ہیں تو دوسری طرف سیلاب نے پو رے ملک کو متا ثر کر دیا ہے،ان حالات میں پوری قوم کو یکجا ہوکر متا ثرین کی امدا کے لیئے مید عمل میں اتر نا ہو گا ،انہوں نے صوبائی اور ضلعی عہدیداروں کو ہدایت کرتے ہوئے کہا کہ وہ متاثرین سیلاب کی امداد میں کوئی کسر اٹھا نہ رکھیں اور ادویات ،اشیائے خورونوش،اوردیگر اشیائے ضروریہ کی فراہمی یقینی بنائیں،اسی طرح آئی ڈی پیز کے امداد کیلئے بھی کارکنان متحرک ہیں اور اپنا فریضہ سمجھ کر امدادی کاموں مزید تیز تر کریں۔

انہوں نے کہا کہ کوئی بھی اصلاحاتی کام یا تبدیلی پارلیمنٹ کے ذریعے آسکتی ہے کیونکہ ملک میں تبدیلی صرف بیلٹ کے ذریعے آسکتی ہے اور اگر کسی کو طاقت آزمانے کا شوق ہے تو وہ سیاسی میدان میں ووٹ کی طاقت کے ذریعے اس کا مظاہرہ کرے،پاکستان اسلامی جمہوریہ ریاست ہے،کسی کو ڈنڈے اور احتجاج کے بل بوتے پر اپنی مرضی کا نظام مسلط کرنے کی اجازت نہیں دی جاسکتی۔

متعلقہ عنوان :