سینیٹ کی قائمہ کمیٹی کابینہ سیکرٹریٹ نے سی ڈی اے کی جانب سے غیر قانونی طور پر پلاٹوں کی الاٹمنٹ کا نوٹس،گزشتہ 5سالوں میں آلاٹ کئے گئے تمام پلا ٹوں کی تفصیلات طلب

کمیٹی کی سی ڈی اے کو اسلام آباد کے تمام بڑے ہوٹلوں کی تجاوزات ختم کر نے کیلئے بھر پور کارروائی کی ہدایت ، مراسلے کے باوجود عمل نہ کر نے پر ڈی سی او اور ایس ایس پی آپریشنز اسلام آباد کو طلب

جمعرات مئی 21:36

اسلام آباد (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔26 مئی۔2016ء) سینیٹ کی قائمہ کمیٹی برائے کابینہ سیکرٹریٹ نے سی ڈی اے کی جانب سے غیر قانونی طور پر پلاٹوں کی الاٹمنٹ کا نوٹس لیتے ہوئے سی ڈی اے سے گزشتہ 5سالوں میں آلاٹ کئے گئے تمام پلا ٹوں کی تفصیلات طلب کر لیں۔ کمیٹی نے سی ڈی اے کو اسلام آباد کے تمام بڑے ہوٹلوں کی تجاوزات کو ختم کر نے کیلئے بھر پور کارروائی کی بھی ہدایت کر تے ہوئے سی ڈی اے کی جانب سے تجاوزات کے خاتمے کیلئے مراسلہ لکھنے کے باوجود اس پر عمل نہ کر نے پر ڈی سی او اسلام آباد اور ایس ایس پی اپریشنز اسلام آباد کو طلب کر لیا ۔

جمعرات کو کمیٹی کا اجلاس چیئر مین طلحہ محمود کی زیر صدارت پارلیمنٹ ہاؤس مین ہوا،اجلاس میں اراکین کمیٹی کے علاوہ ،وزیر مملکت برائے کیڈ طارق فضل چوہدری ، سی ڈی اے اور متعلقہ اداروں کے اعلیٰ حکام نے شرکت کی۔

(جاری ہے)

اجلاس میں چیئر مین کمیٹی طلحہ محمود نے اسلام آباد کے بڑے ہوٹلوں کی جانب سے کی گئی تجاوزات پر کہاکہ وفاقی دارالحکومت میں تجاوزات ایک بہت بڑا مسئلہ ہے، سی ڈی اے کو چاہیے کہ تجاوزات کے خلاف بھر پور کارروائی کرتے ہوئے ان تمام تجاوزات کو مسمار کر دے جو عوام الناس کیلئے رکاوٹ کا باعث بن رہی ہیں اور انکی وجہ سے شہر کی خوبصورتی بھی خراب ہو رہی ہے، کمیٹی نے سی ڈی اے کو ہدایت دی کہ تمام بڑے ہوٹلوں کی تجاوزات کو ختم کر نے کیلئے بھر پور کارروائی عمل میں لائی جائے ۔

سی ڈی اے حکام نے کمیٹی کو بتایا کہ ڈپٹی کمشنر اسلام آباد اور ایس ایس پی آپریشنز کو اس سلسلے میں خصوصی مراسلہ بھی لکھا گیا تھا تاہم ابھی تک کوئی جواب موصول نہیں ہوا۔ کمیٹی نے مسئلے کی اہمیت اور حساسیت کو دیکھتے ہوئے ڈی سی اسلام آباد اور ایس ایس پی اپریشنز کو طلب کر لیا۔ کمیٹی نے اسلام آباد کے سیکٹرز آئی نائن اور آئی ٹین کی سٹرکوں کی خستہ حالی کا بھی سختی سے نوٹس لیا اور5 ماہ کے اندر سٹرکوں کی حالت بہتر کرنے کی ہدایت کر دی ۔

کمیٹی کے چیئرمین نے کہا کہ سی ڈی اے کی زیادہ تر توجہ ان سیکٹرز پر ہے جہاں امیر طبقہ رہتا ہے ۔ تمام سیکٹرز کا مساوی طور پر خیال رکھا جائے۔ چیئرمین کمیٹی سینٹر طلحہ محمود کے سوال کے جواب میں وزیر برائے کیڈ طارق فضل چوہدری نے کہا کہ بطو ر وزیر سی ڈی اے سے غیر قانونی طور پر الاٹ کئے گئے پلاٹس کی تفصیلات مانگیں ہیں ۔ سینکڑوں کے حساب سے پلاٹس غیر قانونی طور پر الاٹ کئے گئے ۔

چیئرمین کمیٹی نے کہا کہ اس سلسلے میں پانچ سالہ ریکارڈ کمیٹی کو فراہم کیا جائے ۔ کمیٹی نے پاک چائنا فرینڈ شپ سینٹر کے احاطہ میں قائم ریسٹورنٹ کو بروئے کار لانے پر زور دیتے ہوئے کہا کہ CDA اس سلسلے میں موثر اقدامات کرے اور ریسٹورنٹ کو فعال بنایا جائے ۔جبکہ کمیٹی نے یہ بھی تجویز دی کہ سینٹر میں قائم کمیٹی رومز کے کرائے بہت زیادہ ہیں ضروری ہے کہ کرائے کم کئے جائیں ۔کمیٹی نے اسلام آبا دسٹیزن کلب اور کیرج فیکٹری کے قریب 24 ایکٹرکی زمین کی بڈنگ کے حوالے سے تفصیلی رپورٹ طلب کر لی ہے جبکہ چیئرمین CDA اور اسلام آباد کے میئر کے مابین اختیارات کی تقسیم کے حوالے سے بھی تحریری رپورٹ مانگی ہے ۔