سپیشل سیکیورٹی ڈویژن میں نئی بھرتیوں میں بلوچستان کو زیادہ سے زیادہ نمائندگی دی جائے گی‘ وزیر دفاع

پیر اگست 19:40

سپیشل سیکیورٹی ڈویژن میں نئی بھرتیوں میں بلوچستان کو زیادہ سے زیادہ ..
اسلام آباد ۔ (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 07 اگست2017ء) وزیر دفاع انجینئر خرم دستگیر نے کہا ہے کہ سپیشل سیکیورٹی ڈویژن میں نئی بھرتیوں میں بلوچستان کو زیادہ سے زیادہ نمائندگی دی جائے گی‘ ڈی ایچ اے کے انتقال کا موجودہ نظام ذیلی دفاتر نہ ہونے کی وجہ سے تشکیل شدہ ہیئت میں نہیں ہے تاہم ایک سافٹ ویئر تیار کرنا زیر غور ہے تاکہ متعلقین کی سہولت کے لئے تمام ڈی ایچ ایز کے درمیان باہمی رابطہ قائم ہو سکے۔

پیر کو قومی اسمبلی میں وقفہ سوالات کے دوران شگفتہ جمانی کے سوال کے جواب میں وزیر دفاع نے کہا کہ سپیشل سیکیورٹی ڈویژن اپریل 2015ء میں پاک آرمی سے عملہ لے کر بنایا گیا تھا۔ اب جوں جوں اس میں بھرتی ہو رہی ہے بلوچستان کے رہنے والوں کو زیادہ سے زیادہ شامل کرنے کے لئے اقدامات اٹھائے جارہے ہیں۔

(جاری ہے)

ایک سوال کے جواب میں انہوں نے بتایا کہ کیڈٹ کالج صوبائی معاملہ ہے۔

اگر کیڈٹ کالج کہیں پر قائم کرنا ہے تو یہ سوال صوبائی اسمبلی میں پوچھا جائے۔ نعیمہ کشور کے سوال کے جواب میں وزیر دفاع نے کہا کہ ڈی ایچ اے ایک سافٹ ویئر تیار کرنے پر غور کر رہی ہے تاکہ متعلقین کی سہولت کے لئے جملہ ڈی ایچ ایز کے درمیان باہمی رابطہ قائم ہو سکے۔ انہوں نے کہا کہ ریگن ٹائون میں ڈی ایچ اے پشاور کے حوالے سے خلفشار کا جائزہ لیں گے۔ کینٹ ایریاز میں عوامی شکایات کے ازالے کے لئے مختلف اراکین کے ساتھ مل کر کوئی لائحہ عمل ہونا چاہیے۔

متعلقہ عنوان :