احتساب عدالت نے تین ریفرنسز میں نواز شریف کی استثنٰی کی درخواست منظور کرلی، سماعت 13اکتوبر تک ملتوی

مریم نواز اور کیپٹن (ر) محمد صفدر کی ضمانت منظور، حسین نواز اور حسن نواز کا مقدمہ الگ کرنے کا حکم

پیر اکتوبر 14:43

اسلام آباد ۔ (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین - اے پی پی۔ 09 اکتوبر2017ء) احتساب عدالت نے قومی احتساب بیورو (نیب ) کی جانب سے دائر تین ریفرنسز میں سابق وزیراعظم محمد نواز شریف کی استثنٰی کی درخواست منظور کرتے ہوئے سماعت 13اکتوبر تک ملتوی کر دی، عدالت نے مریم نواز اور کیپٹن (ر) محمد صفدر کی ضمانت بھی منظور کرلی۔ عدالت نے سابق وزیر اعظم محمد نواز شریف کے صاحبزادے حسین نواز اور حسن نواز کا مقدمہ الگ کرنے کے بھی احکامات جاری کردیئے ہیں۔

پیر کو احتساب عدالت کے جج محمد بشیر نے نیب کی جانب سے دائر ریفرنسز کی سماعت کی۔ اس موقع پر سابق وزیراعظم کی صاحبزادی مریم نواز عدالت میں پیش ہوئیں، ان کی جانب سے خواجہ حارث ایڈووکیٹ نے اپنا وکالت نامہ جمع کرایا۔ سماعت کے دوران نیب اہلکاروں نے رکن قومی اسمبلی کیپٹن (ر) محمد صفدر کو بھی عدالت میں پیش کیا۔

(جاری ہے)

سماعت کے دوران عدالت نے حکم دیا کہ مریم نواز ضمانتی مچلکے جمع کرائیں جس پر انہوں نے 50 لاکھ روپے مالیت کے ضمانتی مچلکے جمع کرائے۔

وزیر مملکت کیڈ ڈاکٹر طارق فضل چوہدری نے ان کی طرف سے ضمانتی مچلکے جمع کرائے جبکہ سابق وفاقی وزیر سینٹر پرویز رشید اور سینٹر ڈاکٹر آصف کرمانی نے بطور گواہ دستخط کئے۔اس موقع پر ریفرنس کی نقول مریم نواز کو دی گئیں۔ سماعت کے دوران کیپٹن (ر) محمد صفدر کے وکیل نے موقف اختیار کیا کہ میرا موکل عدالت میں پیشی کیلئے بیرون ملک سے آیا تاہم نیب اہلکاروں نے ایئرپورٹ سے گرفتار کرلیا، ان کی درخواست ضمانت بعد از گرفتاری منظور کی جائے جس پر عدالت نے کیپٹن (ر) محمد صفدر کو بھی 50 لاکھ روپے کے مچلکوں کے عوض رہا کرنے کا حکم دیتے ہوئے ہدایت کی کہ بیرون ملک جانے سے قبل عدالت کو آگاہ کیا جائے۔

سماعت کے دوران نیب کے پراسیکیوٹر نے عدالت سے استدعا کی کہ حسن اور حسین نواز کا مقدمہ الگ کرتے ہوئے دونوں کو اشتہاری قرار دیا جائے۔ عدالت نے نیب کی درخواست منظور کرتے ہوئے سابق وزیراعظم محمد نواز شریف، مریم نواز اور کیپٹن (ر) محمد صفدر کا ٹرائل الگ کرتے ہوئے حسن نواز اور حسین نواز کا مقدمہ الگ کرنے کی ہدایت کردی۔ عدالت نے حسین نواز اور حسن نواز کا اخباری اشتہار جاری کرنے کا بھی حکم دیا۔

سماعت کے دوران محمد نواز شریف کی جانب سے بھی وکیل خواجہ حارث عدالت میں پیش ہوئے اور درخواست دائر کی کہ سابق وزیر اعظم کی اہلیہ لندن میں بیمار ہیں اور وہ ان کی عیادت کیلئے وہاں موجود ہیں انہیں حاضری سے 15دن کا استثنٰی دیا جائے۔ سماعت کے دوران بیگم کلثوم نواز کی میڈیکل رپورٹ بھی عدالت میں جمع کرائی گئی۔ سماعت کے دوران نیب پراسیکیوٹر نے سابق وزیر اعظم کی حاضری سے استثنیٰ کی درخواست کی مخالفت کرتے ہوئے عدالت سے استدعا کی کہ نواز شریف کے وارنٹ گرفتاری جاری کئے جائیں۔

عدالت نے نیب کی درخواست مسترد کرتے ہوئے محمد نواز شریف کو ایک دن حاضری سے استثنٰی دیتے ہوئے سماعت13اکتوبر تک ملتوی کردی۔ مریم نواز اور کیپٹن (ر)محمدصفدر کی احتساب عدالت میں پیشی کے موقع پر جوڈیشل کمپلیکس کے باہر سیکیورٹی کے سخت انتظامات کئے گئے تھے، سیکیورٹی کے پیش نظراحاطہ عدالت میں ایف سی اور اسلام آباد پولیس کے سینکٹروں اہلکار تعینات کئے گئے تھے ۔