فلسطین نے مشاورت کیلئے اپنے سفیر کو امریکہ سے واپس بلا لیا

امریکی فیصلے کے بعد غزہ کی پٹی میں پرتشدد واقعات میں اب تک 13 فلسطینی شہید ہو چکے ہیں

پیر جنوری 12:52

بیت المقدس (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 01 جنوری2018ء) امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی جانب سے یروشلم کو اسرائیل کا دارالحکومت تسلیم کرنے کے چند ہفتوں بعد فلسطینیوں نے امریکہ میں اپنے سفارتکار کومشاورت کے لیے واپس بلایا ہے۔فلسطینی خبر رساں ایجنسی وفا کے مطابق وزیر خارجہ ریاض المالکی پی ایل او کے امریکہ میں سفارتکار حسام کو واپس بلا لیا ہے۔واضح رہے کہ امریکہ کی جانب سے یروشلم کو اسرائیلی دارالحکومت تسلیم کرنے پر فلسطینی صدر محمود عباس نے کہا تھا کہ وہ امریکہ کی جانب سے کسی بھی امن منصوبے کو تسلیم نہیں کریں گے۔

امریکی فیصلے کے بعد غزہ کی پٹی میں پرتشدد واقعات میں اب تک 13 فلسطینی شہید ہو چکے ہیں۔امریکی فیصلے کے بعد اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی نے بھاری اکثریت سے قرارداد منظور کی جس میں امریکہ سے اپنے فیصلے کو منسوخ کرنے کا کہا گیا۔

(جاری ہے)

اتوار کے روز محمود عباس نے یروشلم کو فلسطینی عوام کا ابدی دارالحکومت قرار دیا۔یاد رہے کہ چند روز قبل فلسطین نے پاکستان میں اپنے سفیر ولید ابو علی کو کالعدم تنظیم جماعت الدعوہ کے سربراہ حافظ سعید کی موجودگی میں یروشلم کی حمایت میں منعقد کی گئی ریلی میں شرکت کرنے پر واپس بلا لیا تھا۔

انڈیا نے فلسطین کے سفیر کی اس ریلی میں شرکت پر اعتراض کیا تھا۔فلسطینی وزارت خارجہ کے بیان میں کہا گیا: 'ہم پاکستان میں مقیم فلسطینی سفیر کی یروشلم کی حمایت میں نکالی جانے والی ریلی میں شرکت کو ایک نادانستہ غلطی تصور کرتے ہیں جہاں وہ افراد بھی موجود تھے جن پر دہشت گردی کی حمایت کے الزامات ہیں اور اس غلطی کے باعث فلسطینی ریاست کے صدر کے حکم کے مطابق پاکستان میں فلسطینی سفیر کو فوری طور پر وطن واپس آنے کا حکم دیا گیا ہے۔

متعلقہ عنوان :