عدالتی اصلاحات سے متعلق اپیل :سپریم کورٹ نے وفاق سے جواب طلب کرلیا

عدلیہ میں اصلاحات کے لیے قانون سازی ناگزیر ہے لیکن قانون سازی کرنا ہمارا کام نہیں ہے، قانون سازی کرنا جن کا کام ہے اس میں ہم مداخلت نہیں کرسکتے، چیف جسٹس

پیر فروری 21:06

عدالتی اصلاحات سے متعلق اپیل :سپریم کورٹ نے وفاق سے جواب طلب کرلیا
اسلام آباد(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 19 فروری2018ء) سپریم کورٹ نے عدالتی اصلاحات سے متعلق اپیل پر وفاق سے جواب طلب کرتے ہوئے کیس کی سماعت تین ہفتے کے لیے ملتوی کردی ہے جبکہ کیس کی سماعت کے دوران چیف جسٹس میاں ثاقب نثار نے ریمارکس دیئے کہ عدلیہ میں اصلاحات کے لیے قانون سازی ناگزیر ہے لیکن قانون سازی کرنا ہمارا کام نہیں ہے، قانون سازی کرنا جن کا کام ہے اس میں ہم مداخلت نہیں کرسکتے ۔

(جاری ہے)

پیر کے روز عدالتی اصلاحات سے متعلق درخواست پر سماعت چیف جسٹس میاں ثاقب نثار کی سربراہی میں تین رکنی بنچ نے کی، دوران سماعت چیف جسٹس نے درخواست گزار کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ کیا آپ نہیں چاہتے میں یہ کیس سنو،جس پر درخواست گزار نے کہا کہ میری ایسی قطعی نیت نہیں ہے، چیف جسٹس نے کہا کہ آپ نے لائ ایںنڈ جسٹس کمیشن کو فریق بنایا ہیکمیشن کا میں چیئرمین ہو، چیئرمین ہونے کے ناطے میں کیسے یہ مقدمہ سن سکتا ہوں، درخواست گزار نے کہا کہ لائ اینڈ جسٹس کمیشن کا نام فریق سے نکال دیں، چیف جسٹس کے بینچ کا مقدمہ سننا باعث مسرت ہو گا، چیف جسٹس نے کہا کہ آپ کی درخواس نظام انصاف سے متعلق ہے، عدلیہ میں اصلاحات کی ضرورت ہے جس کے لیے قانون سازی نا گزیر ہے، لیکن قانون سازی کرنا ہمارا کام نہیں ہے، قانون سازی کرنا جن کا کام ہے اس میں ہم مداخلت نہیں کر سکتے،کچھ چیزیں ایسی بھی ہیں جو خود سے بہتر کی جا سکتی ہیں،بعد ازاں عدالت نے درحواست پر وفاق سے جواب طلب کرتے ہوئے کیس کی سماعت تین ہفتوں کے لیے ملتوی کردی۔

متعلقہ عنوان :