ہزاروں کلاس فور ملازمین نے مطالبات کے منظوری کیلئے 24 اپریل کو خیبر پختونخوا اسمبلی کے سامنے دھرنے کا اعلان کر دیا

بدھ اپریل 13:50

ہری پور۔ (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 18 اپریل2018ء) خیبر پختونخوا کے ہزاروں کلاس فور ملازمین نے ٹائم سکیل کی فراہمی، تنخواہوں میں 200 فیصد اضافہ، درجہ چہارم ملازمین کی آٹھ گھنٹے ڈیوٹی، پنشن مسائل کے خاتمہ اور آسان اقساط پر غریب کلاس فورس ملازمین کو تین مرلہ رہائشی سکیموں کی منظوری کیلئے 24 اپریل کو صوبائی اسمبلی کے سامنے احتجاجی مارچ اور دھرنے کا اعلان کر دیا۔

آل پاکستان کلاس فور ایسوسی ایشن خیبر پختونخوا کے نائب صدر قاضی رقیب نے محمد اقبال، راشد محمود اور دیگر رہنمائوں کے ہمراہ میڈیا سے بات چیت کرتے ہوئے بتایا کہ حکمرانوں نے اپنی تنخواہوں اور مراعات میں چار چار سو فیصد اضافہ کروا لیا ہے مگر انہیں صوبہ بھر کے اداروں میں ڈیوٹی انجام دینے والے ہزاروں غریب کلاس فور ملازمین کی پریشان حالی اور تنگ دستی کی ذرا بھر بھی پرواہ نہیں، چند ہزار روپے ماہوار کی قلیل تنخواہ پر کتنی مشکل سے یہ لوگ گذارا کر رہے ہیں۔

(جاری ہے)

انہوں نے کہا کہ ہمیں ہر سال سڑکوں پر نکل کر بے حس حکمرانوں کی توجہ اپنی کمیونٹی کی معاشی بدحالی اور زبوں حالی کی طرف مبذول کروانا پڑتی ہے تب جا کر یہ حکمران اونٹ کے منہ میں زیرہ کے مترادف تنخواہوں میں حقیر سا اضافہ کرتے ہیں جو نہ ہونے کے مترادف ہے۔ انہوں نے کہا کہ یہی وجہ ہے کہ ہزاروں غریب کلاس فور ملازمین کو ہر سال چیخ چیخ کر حکمرانوں کی توجہ حاصل کرنا پڑتی ہے اور ہمیشہ کی طرح امسال بھی 24 اپریل کو ہزاروں کلاس فور ملازمین گورنمنٹ ہائی سکول نمبر ون پشاور میں گرینڈ جلسہ اور صوبائی اسمبلی تک ریلی نکالیں گے اور صوبائی اسمبلی کے باہر احتجاجی دھرنا دیں گے۔

متعلقہ عنوان :